اردوئے معلیٰ

Search

اسم تیرا ہے ثنائے تازہ

اک نئی نعت نوائے تازہ

 

یوں بھی کہلائی تری بات حدیث

اس میں رہتی ہے ادائے تازہ

 

شہرِ جاناں ہے بہت عطر فشاں

لے کے زلفوں کی ہوائے تازہ

 

شہرِ انور کے چمکتے کوچے

نسبتِ ضَو کی ضیا ئے تازہ

 

لمس پاتے ہی ترے قدموں کا

ہو گئی خاک شفائے تازہ

 

سایہ افگن ہے بہ فیضِ مدحت

حرف و خامہ پہ ردائے تازہ

 

یہ جو مہکا ہے مرا صحنِ سخن

یہ ہے نعتوں کی فضائے تازہ

 

نعت لفظوں کی ہے طلعت باری

حرف و معنی کی ضیائے تازہ

 

نعت نعمت کا تشکّر پیہم

شکرِ نعمت کی ادائے تازہ

 

نعت آقا کی عطا کا جوبن

نعت منعم کی عطائے تازہ

 

نعت آقا کی مجسّم نعمت

نعت آقا کی رضائے تازہ

 

نعت آقا کا کرم بارِ دگر

نعت بندے کی وفائے تازہ

 

نعت احساس کا عجزِ لفظی

نعت تنسیخِ انائے تازہ

 

نعت کے حرف، معانی کا بھرم

لطف رہتا ہے ورائے تازہ

 

اب چلو تم بھی مدینے نوری

لے کے یہ اپنی ثنائے تازہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ