اردوئے معلیٰ

Search

اسم تیرا ہے محمّد تو تری ذات کریم

ذکر عالی ہے ترا اور ترا خلق عظیم

 

تو وہ داتا کہ عدو تیرے کرم سے نادم

اے کہ تو رفقِ مجسّم اے رؤف اور رحیم

 

قافلے یوں تری یادوں کے سحر دم اُترے

جیسے گلشن میں چلی آئے کہیں بادِ نسیم

 

تیرے ہوتے ہوئے کیوں کر نہ معطر ہو حیات

جب ترا ذکر معنبر ہے تری یاد شمیم

 

بس یہی بات رہی لطف فشاں، خیر فزا

جرم جتنے بھی ہوں رہتا ہے ترا فضل عمیم

 

تیرے آنے ہی پہ موقوف ہے گھر کی رونق

تیری ہی چاپ کو ترسے ہے مرے دل کا حریمِ

 

اپنے نوری کو عطا کیجیے دیدار کا جام

خوانِ انعام کا ہے یہ بھی نمک خوار قدیم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ