اردوئے معلیٰ

Search

اس قدر رنگ چھپائے تو نہیں جا سکتے

ہم پسِ مرگ بھلائے تو نہیں جا سکتے

 

تم ہو سورج تو ذرا آؤ سوا نیزے پر

صرف اک دھوپ سے سائے تو نہیں جا سکتے

 

کچھ مقدر کی عنایات ہیں لازم ورنہ

اس قدر درد کمائے تو نہیں جا سکتے

 

کس کو معلوم کہ اس شخص پہ کیا بیت گئی

بے سبب پھول جلائے تو نہیں جا سکتے

 

تو بھی کچھ بامِ طلسمات کو اونچا کر لے

ہاتھ ہر روز کٹائے تو نہیں جا سکتے

 

دشتِ معدوم کے باسی ہیں ، بلانے والو

شہرِ امکان میں پائے تو نہیں جا سکتے

 

ضبط کی اور حقیقت ہے مگر چارہ گرو

زخم ہاتھوں سے مٹائے تو نہیں جا سکتے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ