اردوئے معلیٰ

Search

اس چہرۂ حسیں کا خیالِ حسیں رہے

دل میں کھلی سدا یہ کتابِ مبیں رہے

 

گلشن پسند ہم تھے پہ صحرا نشیں رہے

اندوہگیں سے ہائے ہم اندوہگیں رہے

 

سر مستی و سرور کا اس کے ٹھکانہ کیا

جس دل کی سمت وہ نگہِ سرمگیں رہے

 

خاکی تھے ہم تو خاک سے نسبت نہیں گئی

روئے زمیں سے اٹّھے تو زیرِ زمیں رہے

 

اس طرح بھی ملی ہے کبھی منزلِ مراد؟

دیکھی کہیں جو دھوپ تو سایہ نشیں رہے

 

منزل کی سمت چلتے زمانہ گزر گیا

دیکھا پلٹ کے جب تو جہاں تھے وہیں رہے

 

ہر لحظہ مٹتے جاتے ہیں رنگیں نقوشِ دہر

دنیا ہماری آنکھ میں کیونکر حسیں رہے

 

ہر آرزوئے دل سے تقاضا ہے روز و شب

جائے نکل یہ دل سے مرے پھر کہیں رہے

 

اللہ رے انقلابِ زمانہ کہ اے نظرؔ

کافر یہ کہہ رہا ہے مسلماں نہیں رہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ