اردوئے معلیٰ

اس کو ہے دو جہان کی راحت ملی ہوئی

جس کو ہے میرے شاہ کی چاہت ملی ہوئی

 

ان کو قسم خدا کی ہے جنت ملی ہوئی

جن کو شہِ امم کی ہے قربت ملی ہوئی

 

جو آلِ مصطفی کو ہے عظمت ملی ہوئی

وہ اور بھی کسی کو ہے رفعت ملی ہوئی؟

 

ہیں بادشاہ دیکھ کے حیرت سے دم بخود

ان کے فقیر کو ہے وہ عزت ملی ہوئی

 

میں بھی تو ہوں غلام دیارِ حبیب کا

میری بھی ہے حضور سے نسبت ملی ہوئی

 

آتی ہے روز چوم کے روضہ حضور کا

بادِ صبا کو خوب ہے قسمت ملی ہوئی

 

ہوتی ہے صِرف ان کی مدینے میں حاضری

جن کو حضور سے ہو اجازت ملی ہوئی

 

ہوتی ہے صَرف مدحِ خدا و رسول میں

آصف مجھے ہے جتنی بھی طاقت ملی ہوئی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات