اس کی عطا ہے

اس کی عطا ہے

ہر لمحہ ہے

 

علم و عمل کا

وہ مولا ہے

 

مالک و حاکم

اس کو کہا ہے

 

ہر ہر دل کی

وہ ہی صدا ہے

 

راحمِ عالم

ہر ہر کا ہے

 

اسمِ محمد

دل کی دوا ہے

 

وردِ لساں اک

صلِ علیٰ ہے

 

سارا عالم

اس کا گدا ہے

 

سائل در سے

لگ کے کھڑا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ