اشکِ غم و فراق ہیں گنگ و جمن کی آگ

اشکِ غم و فراق ہیں گنگ و جمن کی آگ

یہ آگ ڈھونڈتی ہے تری انجمن کی آگ

 

آرائش جمال سے پہلے ترا جمال

یہ سادگی کی آگ ہے وہ بانکپن کی آگ

 

اپنے لبوں کی آپ ہی تعریف کیجئے

جب آپ کہہ رہے ہیں گلوں کو چمن کی آگ

 

پروانوں کے پروں کی ہوا نے بجھا دیے

ایسے چراغ بھی تھے کسی انجمن کی آگ

 

راہِ وفا کو دیکھئے شعلہ پسند ہے

پاؤں کے آبلے ہیں ضیاؔ گامزن کی آگ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ