اردوئے معلیٰ

Search

اشکِ کم ظرف مرا ضبط ڈبو کر نکلا

میں جسے قطرہ سمجھتا تھا سمندر نکلا

 

جذبۂ شوقِ نظارہ بھی مری آنکھ میں تھا

حسنِ نظارہ بھی اس آنکھ کے اندر نکلا

 

بارہا دستِ مسیحا سے بھی کھائے ہیں فریب

ہم نے نشتر جسے سمجھا وہی خنجر نکلا

 

ہم سمجھتے تھے کہ سادہ ہے محبت کی کتاب

حاشیہ اس میں مگر متن سے بڑھ کر نکلا

 

مرحلہ جب کوئی ایثار کا آیا سرِ بزم

قرعۂ فال مرے نام کا اکثر نکلا

 

ایسا آسیب ہے گلیوں میں سنا ہے کہ ظہیرؔ

گھر پلٹ کر نہیں آتا کہ جو باہر نکلا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ