اردوئے معلیٰ

Search

اصلِ مسجودِ مَلک ، جانِ مہِ کنعان ہو

آمنہ کے لعل ! تم سب موتیوں کی کان ہو

 

تم سے ہی ہر دور میں توحید کا اعلان ہو

کَنزِ مَخفیِّ اَزل کی تم سے ہی پہچان ہو

 

’’ لِی مَعَ اللہ ‘‘ کا تقرّب ہے تمہارا وصفِ خاص

قریۂِ’’ یُطعِم و یَسقِی ‘‘ کے تمہی مہمان ہو

 

سارے دریاؤں کا پانی روشنائی گر بنے

پھر بھی خارج از حدِ تحریر تیری شان ہو

 

اَنھُرِ شرع و طریقت کا تمہی مَجمَع بنے

اور تمہی اِک مُلتقائے اَبحُرِ عرفان ہو

 

دوشِ نکہت پر نہ کیوں ہو موجۂِ فکر و خیال

یادِ گُل سے جب مہکتا کوچۂِ اَذہان ہو

 

سر پہ نعلِ مصطفیٰ تشریف لائے تو سہی

نفسِ کافر کو ابھی حاصل رہِ ایمان ہو

 

انعقادِ مجلسِ میثاق تھا جن کے لیے

کیوں نہ ان کی عظمتوں پر میری جاں قربان ہو؟

 

آیۂِ ” تِلکَ الرُّسُل ” اس مدّعا پر ہے دلیل

انبیا میں سب سے افضل تم شہِ ذیشان ! ہو

 

عقلِ افلاطون و تاجِ قیصری قدموں میں ہے

مُلکِ عرش و فرش و دانش کے تمہی سلطان ہو

 

اے معظمؔ ! نیکیوں سے گرچہ دامن ہے تہی

کیا عجب حرفِ ثنا سرمایۂِ غُفران ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ