اردوئے معلیٰ

Search
قصیدہ درِ بیان ِمعجزہِ معراج ِ مصطفٰی

 

افتخارِ کائناتِ حسن ہے سویا ہوا

بسترِ راحت پہ فیضِ نور میں کھویا ہوا

فصلِ دل میں وصلِ حق کا بیج ہے بویا ہوا

ہاتفِ غیبی سے رب العالمیں گویا ہوا

 

آج اٹھ جائیں گے یکدم بیچ کے سارے حجاب

آج اطمینان پائے گا جہانِ اضطراب

 

حسنِ باغِ خلد پر جوشِ جوانی آ گیا

غم کے ماروں کو پیامِ شادمانی آ گیا

جانبِ حق سے یہ حکمِ ضوفشانی آ گیا

اٹھ کے وقتِ اطّلاعِ مَنْ رَّآنِیْ آ گیا

 

لا مکاں کے سارے ابوابِ مقفّل کُھل گئے

راز لفظِ لَنْ تَرَانِیْ کے مکمل کُھل گئے

 

طائرِ سدرہ پہن کر نور کا اِک پیرھن

دیکھنے آئے شبستانِ نبی کا بانکپن

چوم کر تلوے ادب سے عرض کی اے جانِ من

میں فدا سو جان سے اے کعبہِ باغِ عدن

 

مژدہِ دیدارِ روئے کبریا لایا ہوں میں

دیکھئے کس کی طرف کیا ہو کے کیا لایا ہوں میں

 

آبِ زم زم کو دلِ اطہر سے نسبت دی گئی

شانِ برّاقِ ارم کو اور عظمت دی گئی

آپ کو اقصٰی میں نبیوں کی امامت دی گئی

کائناتِ کُن فکاں کی کل حکومت دی گئی

 

حکم جاری ہو گیا یہ خالقِ اِجلال کا

آج سے سکّہ چلے گا آمنہ کے لعل کا

 

آسمانوں کو سجایا جا رہا ہے دوستو

چاند تاروں کو بتایا جا رہا ہے دوستو

پردہِ وحدت اٹھایا جا رہا ہے دوستو

ہر طرف یہ نغمہ گایا جا رہا ہے دوستو

 

واجب التعظیم نورِ دلنشیں آنے کو ہے

عرش پر محبوبِ ربّ العالمیں آنے کو ہے

 

مہ وشانِ قدس کی آنکھوں میں مستی آ گئی

موجہِ نہرِ عدن بھی ہستی ہستی آ گئی

بوئے جنّت بھی قبا کے بند کستی آ گئی

نہرِ کوثر چشمِ ساقی کو ترستی آ گئی

 

ہر کسی کو انتظارِ مالکِ کونین ہے

ہاں مگر وہ راہ گیرِ وادئ قوسین ہے

 

لالہ و گُل شبنمی قطروں سے نہلائے گئے

حوریوں کو ریشمی جوڑے بھی پہنائے گئے

حاملینِ عرش کے عارض بھی مہکائے گئے

نت نئے تعظیم کے انداز سکھلائے گئے

 

میزبانی کر رہا ہے خود خداوندِ کریم

اور مہمانی کے رتبے پر ہے انسانِ عظیم

 

خلد میں پرواز شہ بازوں کی اونچی ہو گئی

قمریانِ قدس کی لَے بھی سریلی ہو گئی

مشک بھی ماحول کی یکدم سہیلی ہو گئی

حضرتِ رضواں کی بولی اور میٹھی ہو گئی

 

مدْحَ خوانِ نعلِ سرور آسماں ہونے لگا

فیضِ نورِ سرمدی اُن کا عیاں ہونے لگا

 

چشمِ غلمانِ جِناں میں بھی خماری آ گئی

دشت و صحرا بول اٹھے ، بادِ بہاری آ گئی

کہکشاؤں میں بھی خوئے انکساری آ گئی

دیکھتے ہی دیکھتے اُن کی سواری آ گئی

 

رقص میں بے خود فرشتے گنگنانے لگ گئے

اِن کے آنے سے اندھیرے بھی ٹھکانے لگ گئے

 

محفلِ انجم کو عنواں گفتگو کا مل گیا

حسرتِ مہتاب کو پانی وضو کا مل گیا

حزبِ شیطاں کو بہانہ ھا و ھو کا مل گیا

اور حزبِ حق کو رستہ آرزو کا مل گیا

 

شاہ بازِ فکرِ الفت جوش میں اڑنے لگا

اشہبِ فرقت نشانِ قرب کو مُڑنے لگا

 

قدسیوں نے زمزمِ حکمت کا چھڑکاؤ کیا

عنبریں ماحول نے بھی خوب گھیراؤ کیا

شان کے شایاں خطاکاروں سے برتاؤ کیا

جرم کے دفتر کا چشمِ لطف سے بھاؤ کیا

 

رحمتوں کی بھیک لیتے ہی ہوائیں چل پڑیں

جانبِ روئے محمد سب دعائیں چل پڑیں

 

سوئے حق سے پھر صدائے اُدْنُ مِنِّیْ آ گئی

بندگی کے جذبہِ صادق پہ مستی چھا گئی

ایک دوجے کی ادا دونوں کو اتنی بھا گئی

بات اَسْرٰی سے چلی تھی سوئے اَوْ اَدْنٰی گئی

 

ایسے دیکھا چہرہِ خالق کہ مَا زَاغَ الْبَصَرْ

ہو گئی مسند نشینِ مَا طَغٰی اُن کی نظر

 

عَبْدِہٖ کی گرہیں کھولوں، شرحِ بَارَکْنَا کروں

یا تلاوت آیتِ وَالنَّجْم تا کُبْرٰی کروں

ہاں مگر اسرارِ مَا اَوْحٰی کو جب سوچا کروں

پھر خیال آتا ہے ناقص فہم ہوں، کیا کیا کروں

 

اِس سے بڑھ کر سرحدِ عقلی میں کچھ نہ آ سکا

جس جگہ آقا گئے کوئی وہاں نہ جا سکا

 

اُن کے آگے دائرے امکان کے شرما گئے

خاندانِ وقت کے اُس رات سر چکرا گئے

آنکھ والے اے تبسم دیکھ کر بتلا گئے

منزلیں طے کر کے لاکھوں ایک پل میں آ گئے

 

زور لگ جائے بھلے ادراک کی افواج کا

عقل میں نہ آ سکے گا واقعہ معراج کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ