اردوئے معلیٰ

التزامِ کیفِ خوش کن، اہتمامِ رنگ و نور

ماہِ میلاد النبی ہے صبح و شامِ رنگ و نور

 

نور کی آمد کے ہیں تذکار بحرِ نور میں

شعر و مصرع، حرف و لہجہ سب کلامِ رنگ و نور

 

آسماں سے چل پڑے ہیں نوریوں کے قافلے

قدسیوں کے لب پہ جاری ہے سلامِ رنگ و نور

 

اِس زمیں پر اور ہی رنگینیٔ ترحیب ہے

نکہتوں نے گاڑ رکھے ہیں خیامِ رنگ و نور

 

چادرِ تنویر میں لپٹی ہوئی ہیں ساعتیں

وقت بھی خوش ہو رہا ہے پی کے جامِ رنگ و نور

 

نور بھی تو رنگ ہے اور رنگ بھی گویا ہے نور

آج تو کچھ اور ہی ہے یہ خرامِ رنگ و نور

 

آمنہؓ کے پاک گھر میں چاند سورج کا ورود

کیا عجب ہونے لگا ہے انتظامِ رنگ و نور

 

جشن کے جھنڈے گڑے ہیں کعبہ و فاران پر

پھینک رکھے ہیں فضاؤں نے بھی دامِ رنگ و نور

 

منہ چھپاتی پھر رہی ہیں جوفِ شر میں ظلمتیں

نور اپنے ساتھ لایا ہے پیامِ رنگ و نور

 

طلعتوں میں ڈھلنے والا ہے نظامِ شور و شَر

ظلمتوں کی تاک میں ہیں اب سہامِ رنگ و نور

 

گونج ہے مقصودؔ چاروں سمت صوتِ خیر کی

ہر طرف ہونے لگا ہے التزامِ رنگ و نور

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات