اردوئے معلیٰ

Search

الفاظ کے پردے میں اگر تُو نہیں نکلے

پھر نوک قلم سے کوئی جادو نہیں نکلے

 

دھُلتا ہے مرے اشکوں سے ہر رات یہ پھر بھی

تکیے سے ترے قرب کی خوشبو نہیں نکلے

 

منصف تو بڑی بات اگر ڈھونڈ نے جاؤ

اِس شہر ستم گر میں ترازو نہیں نکلے

 

روئے جو کبھی نیشۂ حالات پہ ہم لوگ

اک زہر ٹپک آیا ہے آنسو نہیں نکلے

 

دشمن مرے بیٹھیں جو حلیفوں کے مقابل

اک فرق بھی دونوں میں سر مُو نہیں نکلے

 

بے آسرا بیٹھے رہے ہم بزم وطن میں

جب تک کہ رہا درد پہ قابو، نہیں نکلے

 

لڑنے کے لئے نکلے ہیں ہم جنگ بقا کی

گھر چھوڑ کے اپنا کوئی بھکشو نہیں نکلے

 

اک عمر ہوئی چھوڑے ہوئے دشت غزالاں

پیروں سے پہ خوئے رم آہو نہیں نکلے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ