اردوئے معلیٰ

اللہ ہو گر اُس کا ثنا گر ، نعت کہوں میں کیسے

میں قطرہ وہ ایک سمندر ، نعت کہوں میں کیسے

 

صدیاں بیتیں آج بھی اُس کا ہے گھر گھر اُجیارا

روشن روشن نور کا پیکر ، نعت کہوں میں کیسے

 

اُس کا نام جگت کی رحمت ، وہ مصری کا میٹھا پربت

میں بہتی ندیا میں کنکر ، نعت کہوں میں کیسے

 

میں کمزور خطا کا پُتلا ، وہ ظاہر باطن کا اُجلا

وہ مُرسل ، ہادی ، پیغمبر ، نعت کہوں میں کیسے

 

مسکینوں میں مسکیں ہے ، سلطانوں میں عرش نشیں ہے

وہ طٰہ ، حٰم ٓ ، مدثر ، نعت کہوں میں کیسے

 

بات بڑی میں اِنساں خاکی ، نعت نبی کی حمد خدا کی

ہو جائیں نہ لفظ برابر ، نعت کہوں میں کیسے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات