امکانِ اوجِ فکر سے اعلیٰ کہوں تجھے

امکانِ اوجِ فکر سے اعلیٰ کہوں تجھے

اک ذہنِ نارسا لئے میں کیا کہوں تجھے

 

فضل و عطا کہوں تجھے جود و سخا کہوں

رحمت جہانِ کُن کی سراپا کہوں تجھے

 

تیری مثال ہی نہیں کیسے مثال دوں

ہر وصف ہر کمال میں یکتا کہوں تجھے

 

تیرے کرم سے عیب ہیں سب کے چھپے ہوئے

بے سایہ ستر پوشِ زمانہ کہوں تجھے

 

سب کچھ ہے میرا تو مرا سب کچھ تجھی سے ہے

دنیا کہوں تجھے’ مری دنیا کہوں تجھے

 

ہر غم کی ہر الم کی دوا تیرے پاس ہے

ائے میرے چارہ گر میں مسیحا کہوں تجھے

 

قربان خود ہی اپنے تصوّر پہ جاؤں میں

تو سامنے ہے اپنی تمنّا کہوں تجھے

 

کہنا بھی چاہوں کہہ بھی نہ پاؤں میں تجھ سے کچھ

کیا کیا ہے میرے دل میں میں کیا کیا کہوں تجھے

 

قدموں میں تیرے کر کے نثار اپنے جان و دل

جانِ جہان جانِ تمنّا کہوں تجھے

 

معراج ہو مری جو مجھے اپنا تو کہے

خود پر ہے فخر مجھ کو کہ اپنا کہوں تجھے

 

عارف ہوں میں کہ بندۂ درگاہ ہوں ترا

مولیٰ کہوں تجھے مرا آقا کہوں تجھے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ