اردوئے معلیٰ

انجامِ طلب ، خواہشِ دیدار ہوا دل

انجامِ طلب ، خواہشِ دیدار ہوا دل

یوں ظلمتِ ہستی میں ضیا بار ہوا دل

 

اے حُسنِ ازل ، خواہشِ اظہار ہوا دل

سرمایۂ مدحت کا طلبگار ہوا دل

 

اُس نور کا مجھ پہ کرمِ خاص ہوا جب

آنکھوں کے لیے حُجلۂ انوار ہوا دل

 

حیرت کے دریچے سے وہ جلوہ نظر آیا

سب بھید کُھلے ، واقفِ اسرار ہوا دل

 

کچھ وقت کسی اور تصور میں جو گزرا

اپنا یہ عقیدہ ہے ، گنہگار ہوا دل

 

اب ساری محبت شہِ خوباں کے لیے ہے

صد شکرِ خدا ، صاحبِ کردار ہوا دل

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ