اردوئے معلیٰ

Search

ان کے جیسا کوئی دو جہاں میں نہیں

جانِ عالم ہیں وہ اور سب سے حسیں

 

چھو کے دامانِ رحمت چلی جب ہوا

فصلِ گل چھا گئی غنچئہِ گل کھلا

 

پھر خزاں ہو گئی جا کے خلوت گزیں

حسنِ انوار سے پھر منور ہوا

 

خلد سے برتری کا تصور ہوا

دشت تھا تیرگی کے جو پہنچا قریں

 

ذات اقدس نے بخشا ہے پائے شرف

معجزے رونما ان کے چاروں طرف

 

رہنِ احسان ہیں آسمان و زمیں

روزِ محشر کہیں وہ ہمیں امتی

 

پھر بنیں سب خطا کار ہی جنتی

آج رب سے دعا مانگ لو ہم نشیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ