اردوئے معلیٰ

اوجِ فلک پہ مہرِ درخشاں تمہیں سے ہے

یہ بزمِ ماہ و انجمِ تاباں تمہیں سے ہے

 

بطنِ صدف میں گوہرِ رخشاں تمہیں سے ہے

ابرِ کرم ہو قطرۂ نیساں تمہیں سے ہے

 

فرشِ زمیں پہ خلقتِ انساں تمہیں سے ہے

دو روزہ زندگی کا یہ ساماں تمہیں سے ہے

 

بوئے گل و نسیم خراماں تمہیں سے ہے

کیفِ بہار و رنگِ گلستاں تمہیں سے ہے

 

شرعِ متین و مصحفِ قرآں تمہیں سے ہے

کشفِ رموز و حکمتِ پنہاں تمہیں سے ہے

 

جہلِ خرد کا چاک گریباں تمہیں سے ہے

روشن جہاں میں مشعلِ ایماں تمہیں سے ہے

 

یادِ خدا کی لذتِ پنہاں تمہیں سے ہے

دنیا میں ترکِ صحبتِ عصیاں تمہیں سے ہے

 

صد چارۂ جراحتِ انساں تمہیں سے ہے

نوعِ بشر کے درد کا درماں تمہیں سے ہے

 

ق

 

صدیقؓ میں حرارتِ ایماں تمہیں سے ہے

قلبِ عمرؓ میں عظمتِ قرآں تمہیں سے ہے

 

رنگِ حیائے چہرۂ عثماںؓ تمہیں سے ہے

حیدر علیؓ سا شیرِ نیستاں تمہیں سے ہے

 

صوم و صلوٰۃ و حج و نصابِ زکوٰۃ سب

دنیا میں آخرت کا یہ ساماں تمہیں سے ہے

 

خلعت عطا ہوئی تمہیں خلقِ عظیم کی

انسانیت کا چشمۂ فیضاں تمہیں سے ہے

 

ہر ہر قدم پہ نقشِ قدم رہنما مجھے

مشکل قدم قدم کی سب آساں تمہیں سے ہے

 

پراں تمہیں سے پرچمِ توحیدِ کبریا

تقسیمِ جامِ بادۂ عرفاں تمہیں سے ہے

 

لات و منات خاک بسر تم نے کر دیے

سجدہ گزاری درِ یزداں تمہیں سے ہے

 

کچھ بھی نظرؔ کے پاس نہیں توشۂ عمل

روزِ جزا نجات کا ساماں تمہیں سے ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات