اول و آخر ، رحمتِ عالم صلی اللہ علیہ وسلم

اول و آخر ، رحمتِ عالم صلی اللہ علیہ وسلم

حُسنِ سراپا، عشقِ مجسِّم صلی اللہ علیہ وسلم

 

مظہرِ نُورِ ذاتِ الٰہی ، سرِ علوم و رازِ خُدائی

ہادیٔ برحق ، رہبرِ اعظم، صلی اللہ علیہ وسلم

 

روئے منور ، سیرتِ اطہر، شافعِ محشر، ساقئی کوثر

تم ہو جمالِ روحِ مکرّم صلی اللہ علیہ وسلم

 

خلق تمہارا کامل واکمل ، ذات تمہاری اشرف و افضل

تم سے مفخّر اُمتِ آدم صلی اللہ علیہ وسلم

 

روحِ اخوت ، وجہِ محبت ، شمعِ ہدایت ، شانِ نبوت

ارفع و افضل ، سرورِ عالم صلی اللہ علیہ وسلم

 

مہرِ گدایاں ، لطفِ یتیماں ، مُحسنِ انساں ، عاشقِ یزداں

شانِ خودی و فخرِ دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم

 

وارثِ ایماں، چشمئہ عرفاں، مہرِ درخشاں، صاحبِ قرآں

شانِ یقیں ،ایقانِ مُسلم صلی اللہ علیہ وسلم

 

ماہِ فروزاں، نیرِِّ تاباں، نعمتِ یزداں، دلبرِ رحماں

تم سے مشرف عرشِ معظم صلی اللہ علیہ وسلم

 

شوق کا عالم اللہ اللہ، عشقِ محمد بلّے بَلّے

نورِ نبی ہے وجہِ دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

تمنا ہے کہ چوموں ان کے در کو
کمتر تھا جذب و شوق، کرم بیشتر رہا
ذکر شاہ ھدیٰ ہے نعت رسول
نعت پیکر باندھتی ہے اذن کی تاثیر سے
لب شاد ، زباں شاد ، دہن شاد ہوا ہے
نعتِ پیغمبرؐ لکھوں طاقت کہاں رکھتا ہوں میں
فہمِ بشر سے ماورا اُن کا مقام ہے
سرتاجِ انبیاء ہو شفاعت مدار ہو
خواہشِ دید! کبھی حیطۂ ادراک میں آ
کس درجہ تلفظ آساں ہے معناً بھی نہایت اسعد ہے

اشتہارات