اردوئے معلیٰ

Search

اُن کے ٹکڑوں پہ شہنشاہوں کو پلتے دیکھا

تاج والو کو بھی قدموں میں مچلتے دیکھا

 

وہ سخی ایسے کہ قاسم بھی ہیں مختار بھی ہیں

بھیک سے ان کی نصیبوں کو بدلتے دیکھا

 

اللہ اللہ وہ بنتا گیا قرآنِ مُبیں

دہنِ پاک سے جو لفظ نکلتے دیکھا

 

جھولیاں آکے یہاں بھرتے ہیں لاکھوں منگتا

چشمئہ فیض اسی در سے اُبلتے دیکھا

 

اُن کی زلفوں کی خم و پیچ میں جو بھی اُلجھا

عمر بھر اس کو نہ پھر ہم نے نکلتے دیکھا

 

گلشنِ خلد کی زینت ہے اسی سے ستار

آتشِ عشقِ نبی میں جسے جلتے دیکھا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ