اِدھر اُدھر کہیں کوئی نشاں تو ھوگا ھی

اِدھر اُدھر کہیں کوئی نشاں تو ھوگا ھی

یہ رازِ بوسۂ لب ھے، عیاں تو ھوگا ھی

 

تمام شہر جو دھندلا گیا تو حیرت کیوں ؟؟؟

دِلوں میں آگ لگی ھے ، دھواں تو ھوگا ھی

 

بروزِ حشر مِلے گا ضرور صبر کا پھل

یہاں تُو ھو نہ ھو میرا ، وھاں تو ھوگا ھی

 

یہ بات نفع پرستوں کو کون سمجھائے ؟؟

کہ کاروبارِ جنُوں میں زیاں تو ھو گا ھی

 

ھم اس اُمید پہ نکلے ھیں جھیل کی جانب

کہ چاند ھو نہ ھو ، آبِ رواں تو ھوگا ھی

 

مَیں کُڑھتا رھتا ھوں یہ سوچ کر کہ تیرے پاس

فُلاں بھی بیٹھا ھو شاید ، فُلاں تو ھوگا ھی

 

یہ بات مدرسۂ دل میں کھینچ لائی مجھے

کہ درس ھو کہ نہ ھو ، امتحاں تو ھو گا ھی

 

مگر وہ پھول کے مانند ھلکی پُھلکی ھے

سو اُس پہ عشق کا پتھر گراں تو ھو گا ھی

 

غزل کے روپ میں چمکے کہ آنکھ سے چھلکے

یہ اندرونے کا دکھ ھے ، بیاں تو ھوگا ھی

 

بڑی اُمیدیں لگا بیٹھے تھے سو اب فارس

ملالِ بے رخئ دوستاں تو ھو گا ھی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جانے کس کی تھی خطا یاد نہیں
ھر حقیقت سے الگ اور فسانوں سے پرے
عشق کچھ ایسی گدائی ھے کہ سبحان اللہ
لو آج ماں، مِری خالہ سے بات کر لے گی
آگئے آپ پر آئے بڑی تاخیر کے ساتھ
اِس کے ہر ذرّے سے پیمان دوبارہ کر لو
یادوں کا ابر چھایا ہے خالی مکان پر
نشے میں ڈُوب گیا مَیں ، فضا ھی ایسی تھی
کوئی صداء ، سوال ، طلب ، کچھ نہیں رہا
گماں امکان کی تاویل ہونے پر نہیں آتا