اردوئے معلیٰ

اِک ذرہِ حقیر سے کمتر ہے میری ذات

ائے بے کراں ، عمیق ، پُر اسرار کائنات

 

سلجھی تو خیر کیا کہ محبت کے ہاتھ سے

کچھ اور اُلجھنوں میں اُلجھتی گئی حیات

 

کیا کچھ نہیں ہیں رنگ سرِ خاکداں مگر

اس کم نصیب خاک کو حاصل نہیں ثبات

 

اِک لمحہِ جنون گزرنے کی دیر میں

بیتے ترے غریب پہ کیا کیا نہ واقعات

 

دِل تو نہیں رہا ہے مگر دشتِ شوق میں

بکھری ہوئی ہیں دُور تلک دِل کی باقیات

 

کیا کچھ نہیں ہے چشمِ تصور کے سامنے

لینے لگے ہیں سانس ، مجسم تخیلات

 

ایندھن بہت ہی کم ہے چراغ ِ حیات میں

جبکہ بہت طویل ہے گہری سیاہ رات

 

ہائے رے سادگی ، ترا کمزور حافظہ

دل ہے کہ پھر سے باندھ رہا ہے توقعات

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات