اردوئے معلیٰ

Search
اِک وصفِ اُلوہی ہے تری ذات میں مفقود
اے شاہد و مشہود!
ہر وصفِ حَسَن ،اس کے سوا ، تجھ میں ہےموجود
اے شاہد و مشہود!
 
گنتی کی حدوں سے ترے اوصاف سوا ہیں
عقلوں سے ورا ہیں
اور دائِرہِ خامۂِ مخلوق ہے مَحدود
اے شاہد و مشہود
 
کیا طرفہ تعلق ہے یہاں دونوں کے مابین ،
حیران ہیں کونین
تو رب کا محمد ہے تو وہ تیرا ہے محمود
اے شاہد و مشہود
 
پہچان کے بھی تجھ کو نہیں مانے کِتابی ،
ہے نَصِّ کتابی
تو اپنے کمالات کے باعث ہوا مَحسود ،
اے شاہد و مشہود
 
حکمت ہے کہ پردے میں رہا حسنِ دل آرا ،
اے شاہ تمہارا
ورنہ تو جہاں مان ہی لیتا تمہیں معبود
اے شاہد و مشہود
 
روضہ ہے ترا کعبہ و کرسی سے بھی افضل ،
اے سیِدِ اکمل
طیبہ کے سبب اَرض ہے افلاک سے مسعود
اے شاہد و مشہود!
 
کیا اس میں رہا شک کہ ہے تو حاضر و ناظر
اے حامی و ناصِر !
جب یہ ہے مسلم کہ ہے تو شاہد و مشہود
اے شاہد و مشہود !
 
بیٹے دیے ماؤں کو تو دنیا ہے سجائی ،با شانِ خدائی
خالق نے مَنائی ہے تِری فرحتِ مولود
اے شاہد و مشہود !
 
دارین میں ٹھہرے ہیں گدا تیرے مکرم
اے شاہِ معظمؔ!
مطرود ترے در کے ہر اک در سے ہیں مَطرود
اے شاہد و مشہود !
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ