آنکھ پتھرائی ہُوئی ہے اب کہیں اندر اُتر

آنکھ پتھرائی ہُوئی ہے اب کہیں اندر اُتر

شیشۂ دل میں اے عکسِ گنبدِ اخضر اتر

 

جذب کے امکان میں لا،اب کوئی موجِ طرب

خواب کے احساس میں اے منظرِ خوشتر اُتر

 

اُن کو آنا ہے نئے لمحوں کی آرائش کے ساتھ

میرے آنگن میں سحَر اب صورتِ دیگر اُتر

 

سوچ بے خود، سَر نہفتہ، حرفِ مدحت منفعل

نقشِ نعلینِ کرم تُو جادۂ دل پر اُتر

 

قاسمِ جنت کے ہاتھوں میں ہے بخشش کا بھرم

دیر ہے کس بات کی اے تلخیٔ محشر اُتر

 

وہ تو ہر اوجِ سخن کی وسعتوں سے ہیں ورا

اے مرے جذبِ رواں ! تُو، تو مرے اندر اُتر

 

فاصلے سے ٹُوٹ جاتا ہے تسلسل کا خمار

منظرِ دیدِ مسلسل آنکھ میں آ کر اُتر

 

مَیں اُسے پھر جوڑ لوں گا نعت کی تدبیر میں

آ کوئی حرفِ طلب ! جبریل کے پَر پر اُتر

 

اِس زمینِ شعر میں مشکل ہے مدحت کی نمو

حرف کے امکان پر اے دیدۂ اختر اُتر

 

صبح باندھوں گا مَیں تجھ کو مقطعِ نعتِ نبی

روشنی کے مطلعِ اظہار پر شب بھر اُتر

 

حاصلِ نظمِ دو عالم، جلوئہ مقصودِؔ کُن

بہرِ تکمیلِ سخن ادراک کے اوپر اُتر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

اللہ کے بعد نام ہے میرے حضور کا
ہے دل میں جلوۂ رُخِ تابانِ مصطفےٰ
عیدِ میلاد ہے آج کونین میں ، ہر طرف ہے خوشی عیدِ میلاد کی
آنکھوں میں اشک، دل میں ہو الفت رسول کی
اے کاش! تصور میں مدینے کی گلی ہو
آپ نےاک ہی نظرمیں مجھکوجل تھل کردیا
عدو کے واسطے، ہر ایک امتی کے لیے
نہ دولت نہ جاہ وحشم چاہتا ہوں
اندازِ کرم بھی ہے جدا شانِ عطا بھی
محمد مصطفیٰ سالارِ دیں ہیں

اشتہارات