آنکھ کو چھُو کے پسِ حدِ گماں جاتی ہے

آنکھ کو چھُو کے پسِ حدِ گماں جاتی ہے

روشنی گنبدِ اخضر کی کہاں جاتی ہے؟

 

مژدۂ اذن سے مربوط ہے طیبہ کا سفر

آرزو روز کراں تا بہ کراں جاتی ہے

 

ربط موقوف نہ ہو آپ کی مدحت سے مرا

ایسا سوچوں بھی تو آقا ! مری جاں جاتی ہے

 

اُن کے دامانِ عنایت کی پنہ مِل جائے

نارسا ہاتھ ہیں اور میری اماں جاتی ہے

 

پہلے آجاتا ہے اُس شہرِ کرم بار سے اذن

ان کی درگاہ میں پھر عرضِ نہاں جاتی ہے

 

نام لیتا ہُوں ترا بہرِ خیالِ نکہت

نعت کہتا ہُوں تو گلشن سے خزاں جاتی ہے

 

خطِ بے حد سے بھی آگے کا سفر تھا معراج

قُرب تو حد ہے جہاں نوکِ کماں جاتی ہے

 

دید، تجسیم نہیں کرتے ہیں احساس کے ہاتھ

آنکھ سے دل کو، بس اِک موجِ رواں جاتی ہے

 

پیشِ سرکار عجب رہتا ہے بے ربط سکوت

پہلے دل رُکتا ہے پھر تابِ زباں جاتی ہے

 

جنتِ ارضی ہے لاریب ترا شہرِ کرم

اس کی ہر ایک گلی سُوئے جناں جاتی ہے

 

بازگشت آئی ہے مقصودؔ اچانک دل سے

نعت اب سُوئے فلک نور فشاں جاتی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

یا خُدا! عشقِ محمدؐ کا عطا اِک جام کر
سوالی آپؐ سے ہے میری چشمِ تر، مرے آقاؐ
عجیب رہتا ہے اب تک خمار آنکھوں میں
جب سے کیا ہے آپ نے انوارِ حق میں گُم
وہ بے نشان کا طلعت نشاں سراجِ منیر
خامۂ خاموش مُضطر، چشمِ پُر نم معتبر
سخن کے ظلمت کدوں کو خورشید کر رہا ہُوں
بس ایک نعت کہی بے زبان سانسوں نے
ہے کلامِ خدا ، کلامِ حضور
محبوب کردگار کی رفعت تو دیکھئے

اشتہارات