اردوئے معلیٰ

Search

اپنی ہستی حباب کی سی ہے

عمر ساری سراب کی سی ہے

 

حبِ سرکار گر نہ ہو دل میں

زندگانی عذاب کی سی ہے

 

ہجر طیبہ میں بے کلی ہے بہت

’’حالت اب اضطراب کی سی ہے‘‘

 

عمرِ سرکار کا ہر اک لمحہ

سامنے اک کتاب کی سی ہے

 

عاصیوں پر حضور کی رحمت

چھاؤں ٹھنڈی سحاب کی سی ہے

 

ہے گناہوں کا بوجھ بھی سر پر

دھوپ بھی آفتاب کی سی ہے

 

آپ شاید یہاں سے گزرے ہیں

بو فضا میں گلاب کی سی ہے

 

یاد ان کی توانا رکھتی ہے

عمرِ پیری شباب کی سی ہے

 

یادِ طیبہ میں ہر گھڑی اپنی

اک سہانے سے خواب کی سی ہے

 

ان کے لب کی جلیل جنبش بھی

اک مفصل خطاب کی سی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ