اردوئے معلیٰ

Search

 

اپنے تصورات کا مارا ہوا یہ دل

لوٹا ہے کارزار سے ہارا ہوا یہ دل

 

صد شکر کہ جنون میں کھوٹا نہیں پڑا

لاکھوں کسوٹیوں سے گزارا ہوا یہ دل

 

آخر خرد کی بھیڑ میں روندا ہوا ملا

اک مسندِ جنوں سے اتارا ہوا یہ دل

 

تم دوپہر کی دھوپ میں کیا دیکھتے اسے

افلاک نیم شب کا ستارا ہوا یہ دل

 

لے دے کہ آشنا بھی یہی کم نصیب تھا

بعد از شکستِ دل بھی سہارا ہوا یہ دل

 

کچھ آسماں بھی راس نہٰیں آ سکا اسے

کچھ آسمان کو نہ گوارا ہوا یہ دل

 

آئینہ فراق میں حیرت سے جھانکتا

ساکت کھڑا ہے تیرا سنوارا ہوا یہ دل

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ