اردوئے معلیٰ

Search

اک نور سا تا حد نظر پیشِ نظر ہے​

میں اور مدینے کا سفر پیشِ نظر ہے​

 

ہر چند نہیں تاب مگر دیکھیے پھر بھی​

وہ مطلع انوارِ سحر پیشِ نظر ہے​

 

جو میرے تخیل کے جھروکے میں کہیں تھا​

صد شکر وہ مقصودِ نظر پیشِ نظر ہے​

 

بخشش کا وسیلہ ہے ہر اک اشکِ ندامت​

کچھ خوف ہے باقی ، نہ خطر پیشِ نظر ہے​

 

اس بارگہہ ناز کا صد رنگ نظارا​

ہر لحظہ بہ انداز دگر پیشِ نظر ہے​

 

ہر چند سوئے کعبہ میرے سجدے ہیں لیکن​

وہ قبلہ ہر اہلِ نظر پیشِ نظر ہے​

 

گو فردِ عمل میری گناہوں سے بھری ہے​

ہر لحظہ کرم ان کا مگر پیشِ نظر ہے​

 

کیا بام و درِ خلد نگاہوں میں جچیں گے​

فردوس کے سردار کا در پیشِ نظر ہے​

 

مانگی تھیں جو بادیدہ تر میں نے دعائیں​

ایسی ہی دعاوں کا اثر پیشِ نظر ہے​

 

میں اور مواجہ پہ یہ لمحاتِ حضوری​

آرامِ دل و نورِ نظر پیشِ نظر ہے​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ