اردوئے معلیٰ

اگرچہ روزِ ازل سے ہے میرا فن لکھنا

اگرچہ روزِ ازل سے ہے میرا فن لکھنا

مگر مزارِ محبت کو کیا بدن لکھنا

 

ہٹا رہے ہو اگر سائبان پلکوں کے

جو دھوپ پھیل رہی ہے اسے کفن لکھنا

 

میں داستان بھی ہوں زیبِ داستان بھی ہوں

مؤرخو مرے قصے کو من و عن لکھنا

 

وہ جوئے خون بہائیں تو جوئے شیر کہو

دلوں کو چیرنے والوں کو کوہکن لکھنا

 

میں وہ کمال کا شاعر ہوں جس کو آتا ہے

سکوتِ خانہِ ویراں کو انجمن لکھنا

 

قلم ہوئے ہیں قدم تو جنوں نے سیکھا ہے

جبینِ دشت و بیابان پر وطن لکھنا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ