اردوئے معلیٰ

Search

اہلِ دل چشمِ گہربار سے پہچانے گئے

دیدہ ور تیرے ہی دیدار سے پہچانے گئے

 

ہم نے کب دعویٰ زمانے میں کیا الفت کا

ہم تو چپ تھے، ترے انکار سے پہچانے گئے

 

خود کو آزاد سمجھتے تھے مگر وقتِ سفر

ایک زنجیر کی جھنکار سے پہچانے گئے

 

معرکے جو بھی سمندر سے ہوئے ساحل تک

میری ٹوٹی ہوئی پتوار سے پہچانے گئے

 

دشمنی میں نے اصولوں کی بنا پر رکھی

میرے دشمن میرے کردار سے پہچانے گئے

 

آ گیا دست صحافت میں عدالت کا قلم

جھوٹ اور سچ بھی اب اخبار سے پہچانے گئے

 

آج کے دورِ ضرورت میں مشینوں کی طرح

آدمی کام کی رفتار سے پہچانے گئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ