اردوئے معلیٰ

Search

ایک بے نام کو اعزازِ نسب مل جائے

کاش مدّاحِ پیمبر کا لقب مل جائے

 

میری پہچان کسی اور حوالے سے نہ ہو

اقتدارِ درِ سلطانِ عرب مل جائے

 

آدمی کو وہاں کیا کچھ نہیں ملتا ہوگا

سنگ ریزوں کو جہاں جنبشِ لب مل جائے

 

کس زباں سے میں تری ایک جھلک بھی مانگوں

طلبِ حُسن تو ہے حُسنِ طلب مل جائے

 

اب تو گھر میں بھی مسافر کی طرح رہتا ہوں

کیا خبر اذنِ حضوری مجھے کب مل جائے

 

خیمہِ دل ترے جلووں سے منور کرلوں

دیدہِ شوق کو بیداریِ شب مل جائے

 

تو اگر چھاپ غلامی کی لگا دے مجھ پر

مجھ گنہگار کو پروانہِ رب مل جائے

 

دے نہ قسطوں میں مظؔفر کو مَحبت اپنی

جس قدر اس کے مقدر میں ہے سب مل جائے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ