ایک مسکراتی ہوئی نستعلیق نظم

ایک مسکراتی ہوئی نستعلیق نظم ، منظوم خراج از نجمہ منصور
———-
پیاری صدیقہ بیگم
لوگوں کی نظر میں تم
بہت اچھی دانشور ہو
کاغذ اور قلم کے ساتھ تمہارا رشتہ
اتنا ہی گہرا ہے
جتنا روح کا بدن سے
لفظ کا کتاب سے
اور خواب کا آنکھ سے
مگر میں نے جب جب
تمہاری تصویر کو دیکھا
تمھاری ژندہ مسکراہٹ سے
میرے اندر
ایک نہ ختم ہونے والی
خنک روشنی پھیل گئی
خاموش مناجات کی صورت
میں تمہیں
بس عقیدت سے دیکھتی
اور دیکھتی رہ جاتی
اکثر سوچتی
شاید کسی روز
ان بند ہونٹوں سے پھوٹتی
دھیمی مسکراہٹ کے پیچھے
چھپے اسرار کو
میری سوچ کی بے چہرگی
مس کریں تو
شاید تمھاری
“پلکوں میں آنسو’
اور دبی”ہچکیاں”
مجھے تمہاری ذات کے
گھنے چھتنار تلے
بیٹھنے دیں
اور میں ایک نظم لکھوں
ایک مسکراتی ہوئی نستعلیق نظم
تمھارے پیکر کو منعکس کرتی ہوئیپیاری صدیقہ
میں جانتی ہوں
ادب میں مشہور ہونا
اور بات ہے
جبکہ زی رتبہ ہونا اور
مگر تم وہ راہبہ تھی
جو تن تنہا
کسی ستائش اور صلے سے بے نیاز
اپنی ذات میں خود
ادب لطیف تھی
پرکھوں کی حرمت کی خاطر
اپنے ہاتھوں سے
لفظوں کے مشکیزے
بھرتی رہی
زندگی کے تلاطم خیز لمحوں میں
تمھارے ہونٹوں پر پھیلی
دھیمی مسکراہٹ
تمھارے لیے اور
مجھ جیسوں کے لئے
دودھیا روشنی کا ہالہ بنی
موتیوں کی صورت
دمکتی رہی

اور آج صدیقہ بیگم تم
منوں مٹی تلے
محو استراحت ہو
لیکن آج بھی تمھاری
وہ بھیگی ہوئی
دھیمی مسکراہٹ زندہ ہے
میرے دل میں
میرے لفظوں میں
اور میری یادوں میں بھی
اور میں
میں تمھارے لیے نظم لکھ رہی ہوں
مسکراتی ہوئی نستعلیق نظم
بالکل تمھاری طرح
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

انتظار
کاغذی مکاں
تمہار ے لئے ایک نظم
ن‘‘(نون)’’
 سوالیہ نشاں
کمٹّڈ سیپریشن کے بعد
کلر بلائنڈ Colour Blind
 ایک ادا
محور
’’جگاوا‘‘

اشتہارات