اے جود و عطا ریز

اے جود و عطا ریز

اے مشک و عطر بیز

 

تو جانِ گلستان

اے غنچہء نوخیز

 

اک نظرِ کرم سے

صحرا ہوئے زرخیز

 

دو بوند ادھر بھی

اے ابرِ کرم بیز

 

اقوال ہیں تیرے

کونین میں ضوریز

 

کوثر کا عطا ہو

پیمانہء لبریز

 

طیبہ میں پہنچ کر

دھڑکن بھی ہوئی تیز

 

مدحت تری ارفع

اشفاقؔ نوآمیز

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ