’’اے رضاؔ جانِ عنادل ترے نغموں کے نثار‘‘

 

’’اے رضاؔ جانِ عنادل ترے نغموں کے نثار‘‘

وجد میں ہیں گل و لالہ و چمن زار و بہار

مدح گوئے شہِ والا ترا کہنا کیا ہے

’’بلبلِ باغِ مدینہ ترا کہنا کیا ہے‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ