اردوئے معلیٰ

Search

اے شافعِ محشر شہِ ابرار اغثنی

ہیں آپ سہارا مرے سرکار اغثنی

 

مل جائیں مقدر سے مجھے وصل کی گھڑیاں

کرتی ہے دعا ہجر کی بیمار اغثنی

 

اے کاش کہ آجائے مدینے سے بلاوا

پھر دیکھ لوں وہ گنبد و مینار اغثنی

 

عاصی پہ کرم اتنے کئے شاہِ امم نے

اک بار پکارا مرے غمخوار اغثنی

 

کشتی مری عصیاں کے طلاطم میں گھری ہے

ہوں آ پ کی رحمت کی طلبگار اغثنی

 

ہو جائے مجھے آپ کا دیدار کسی شب

اس نیند سے ہو ناز نہ بیدار اغثنی

 

دن رات مرے آپ کی مدحت میں بسر ہوں

کر دیجے عطا نعت کے اشعار اغثنی

 

آقا کی اطاعت میں ہی گزرے مرا جیون

ہو جائے حسیں ناز کا کردار اغثنی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ