اے لطف بارِ جملہ عطا ! سیدُ الوریٰ

اے لطف بارِ جملہ عطا ! سیدُ الوریٰ

ممنون تیرے شاہ و گدا ، سیدُ الوریٰ

 

ہے نعت تیری وجہِ نشاطِ درونِ قلب

ہے نام تیرا ردِ بلا ، سیدُ الوریٰ

 

عرضِ نیازِ حالِ شکستہ پہ بھی کرم

کیجیے قبول حرفِ ثنا ! سیدُ الوریٰ

 

پڑھتا ہُوں کربِ شوقِ تمنا میں جب درود

ملتی ہے تا بہ کیف شفا ، سیدُ الوریٰ

 

بس اک نگاہِ لطف و عنایت کی دیر ہے

ہو جائے گی معاف خطا ، سیدُ الوریٰ

 

یومِ فزَع بھی سایۂ تسکیں فزا ملے

سَر پر ہو نعت رنگ ردا ، سیدُ الوریٰ

 

عاجز پڑے ہُوئے ہیں طلب زارِ نعت میں

مَیں اور شوقِ حرف مرا ، سیدُ الوریٰ

 

فرحت قسیم ہیں تری مدحت کے سلسلے

شاداں ہیں میرے صبح و مسا ، سیدُ الوریٰ

 

انعام تیرے دستِ کرم خُو سے سرخرو

احسان تیری طرزِ ادا ، سیدُ الوریٰ

 

بہرِ بیانِ حُسن یہ تمثیلِ نُور ہیں

شمسِ ضحی و بدرِ دُجیٰ ، سیدُ الوریٰ

 

تا زیست خیر زارِ عنایات میں رہے

مقصودؔ یونہی وقفِ ثنا ، سیدُ الوریٰ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ