اے مرکز و منبعِ جود و کرم ، اے میر اُمم

 

اے مرکز و منبعِ جود و کرم ، اے میر اُمم

ہر سمت نصب ہیں تیرے علم ، اے میرِ اُمم

 

دُنیا میں مجھے ُرسوا نہ کیا میں عاصی تھا

محشر میں بھی رکھ لینا یہ بھرم ، اے میرِ اُمم

 

ترے نام کا جب بھی ورد کیا اے شاہ عرب

موقوف ہوئے سب رَنج و اَلم ، اے میرِ اُمم

 

نمناک نگاہوں سے اکثر اک حسرت سے

تکتے رہتے ہیں سوئے حرم ، اے میرِ اُمم

 

تیری یاد نہیں جاتی دل سے، اے راحتِ جاں

کوشش بھی کریں کیوں ایسی ہم ، اے میرِ اُمم

 

توصیف کو لفظ نہیں ملتے، شایانِ شاں

پھر کیسے کریں توصیف رقم ، اے میرِ اُمم

 

اشفاقؔ ہوا ترے در کا گدا، اشفاقؔ ہی کیا!

ترے در کے گدا ہیں اہلِ حشم ، اے میرِ اُمم

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ