اردوئے معلیٰ

اے وقت ذرا تھم جا، یہ کیسی روانی ہے

آنکھوں میں ابھی باقی اک خوابِ جوانی ہے

 

کیا قصہ سنائیں ہم اس عمرِ گریزاں کا

فرصت ہے بہت تھوڑی اور لمبی کہانی ہے

 

اک راز ہے سینے میں، رکھا نہیں جاتا اب

آ کر کبھی سن جاؤ اک بات پرانی ہے

 

سچے تھے ترے وعدے، سچے ہیں بہانے بھی

بس ہم کو شکایت کی عادت ہی پرانی ہے

 

جو کچھ بھی کہا تم نے، تم کو ہی خبر ہو گی

ہم نے تو سنا جو کچھ دنیا کی زبانی ہے

 

گزری جو بنا تیرے اُس عمر کا افسانہ

ہونٹوں کی خموشی ہے، آنکھوں کا یہ پانی ہے

 

اے یادِ شبِ الفت! کچھ اور تھپک مجھ کو

پلکوں پر ابھی باقی دن بھرکی گرانی ہے

 

امید کی خوشبو ہے، یادوں کے دیئے روشن

ہر وقت تصور میں اک شام سہانی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات