اردوئے معلیٰ

Search

اے وہ نگار خانۂ ہستی کے نقشِ اولیں

اے وہ کہ جس کی گردِ پا غازۂ روئے حورِ عیں

 

اے وہ کہ جس کا قلب ہے مہبطِ مصحف مبیں

اے وہ کہ جس کی ذات ہے محبوبِ رب العالمیں

 

اے وہ کہ فرشِ تا بہ عرش پھیلی ہے جس کی روشنی

اے وہ نفس نفس کیا جس نے کہ صرفِ بندگی

 

اے وہ کہ جس کا ہر قدم بر راہِ حق و راستی

اے وہ کہ چشمۂ ہدیٰ منبعِ علم و آگہی

 

اے وہ کہ بندۂ خدا جو ہے مطاعِ بندگاں

ہستی پاک جس کی ہے باعثِ خلقِ دوجہاں

 

اے وہ کہ قدسی الصفت عرشِ بریں کا میہماں

بعدِ خدائے ذو المنن جس کا شرف ہے بے گماں

 

اے وہ کہ جس کی شکل ہے آئینۂ جمالِ حق

اے وہ کہ جس میں منعکس جلوۂ ہر کمالِ حق

 

اے وہ کہ جس کی ذات ہے صنعتِ بے مثالِ حق

اے وہ برائے انس و جاں نعمتِ لازوالِ حق

 

اے وہ کہ راہِ دیں میں ہے جس کا بدن لہو لہو

اے وہ کہ درد مند سب جس کی طرف ہیں چارہ جو

 

اے وہ کہ جس کی شخصیت جانِ جہانِ آرزو

اے وہ کہ جس کا غلغلہ قریہ بہ قریہ سو بہ سو

 

اے وہ کہ جس پہ منتہی سلسلۂ پیمبری

اے وہ کہ جس نے ختم کی دنیا سے رسمِ آذری

 

اے وہ امامِ انبیاء سب پہ ہے جس کو برتری

اے وہ عطا ہوئی جسے دونوں جہاں کی سروری

 

مُطلبی و ہاشمی دُرِّ یتیمِ آمنہ

جس میں بدرجۂ اتم صبر و توکل و غنا

 

حکمِ خدائے پاک ہے پڑھتے ہیں سب بریں بنا

صلِّ علیٰ محمدٍ صلِّ علیٰ نبینا

 

مرجعِ خاص و عام ہے جلوہ گہ شہِ امم

پہنچیں وہاں پہ قافلے بعدِ زیارتِ حرم

 

جنّ و بشر مَلَک سبھی رکھتے ہیں پھونک کر قدم

شہرِ نبی محتشم پاک و لطیف و محترم

 

یومِ نشور الاماں روزِ حساب الحذر

بھاگ رہے ہوں جس گھڑی ہول سے سب اِدھر اُدھر

 

بہرِ حساب جب خدا ہو اپنے تختِ عدل پر

تب ہو شفیعِ عاصیاں سوئے نظرؔ بھی اک نظر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ