اردوئے معلیٰ

بابِ کرم کے سامنے اِظہار دم بخود

بابِ کرم کے سامنے اِظہار دم بخود

پورا وجودِ ُنطق ہے سرکار دم بخود

 

عجزِ تمام سے نہیں ممکن ثنا تری

پھر کیوں نہ ہُوں میں صورتِ دیوار دم بخود

 

اِک رتجگے کی صورتِ مُبہَم ہے رُوبرو

خواہش بہ دید دیدۂ بیدار دم بخود

 

اے حاصلِ طلب ترے آنے کی دیر ہے

دل کی ہے کب سے حسرتِ دیدار دم بخود

 

تو اذن دے تو تشنہ لبی خیر پا سکے

کاسہ بہ بکف ہیں سارے طلبگار دم بخود

 

توبہ نصیب لوگوں کا ہے تجھ سے واسطہ

تیری رضا طلب ہیں گنہ گار دم بخود

 

مقصودؔ اُن کی یاد کے بادل برس پڑے

تھے دشتِ دل کے سارے ہی اشجار دم بخود

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ