بارگۂ جمال میں خواب و خیال منفعل

بارگۂ جمال میں خواب و خیال منفعل

تابِ ُسخن ہے سر بہ خم، شوقِ وصال منفعل

 

پہلے تو خوب زور تھا عرضِ نیازِ دید کا

تیرے حضور آ کے ہے صورتِ حال منفعل

 

کاسۂ حرفِ عجز میں تاب و تبِ ُسخن کہاں

دستِ عطا کے سامنے جود و نوال منفعل

 

ہالۂ رنگ و نور میں گنبدِ سبز کی نمود

لالہ و ُگل کے ساتھ ساتھ سبزہ و ڈال منفعل

 

کوچۂ شہرِ ناز میں رنگوں کی دلکشی تمام

جذبِ بیانِ ُحسن کے سارے کمال منفعل

 

مدحِ جمالِ یار میں پورا وجود دم بخود

صوتِ جواب مضمحل، تابِ سوال منفعل

 

خامۂ شوق و عجز کو اذنِ خیال تک نہیں

اُن کے حضور میں تو ہے نفسِ مثال منفعل

 

کنگرۂ قصرِ نعت پر تابشِ عشق کی طلب

اوجِ نمودِ ناز پر طرزِ مقال منفعل

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جو مجھ سے خطا کار و زیاں کار بھی ہوں گے
اے ختمِ رسل نورِ خدا شاہِ مدینہ
ان کا نہیں ہے ثانی نہ ماضی نہ حال میں
امکانِ حرف و صوت کو حیرت میں باندھ کر
وجودِ شوق پہ اک سائباں ہے نخلِ درود
میں ، مری آنکھیں ، تمنائے زیارت ، روشنی
نبی اکرمؐ شفیع اعظمؐ دکھے دلوں کا پیام لے لو
آنکھ گنبد پہ جب جمی ہوگی
جب چھڑا تذکرہ میرے سرکار کا میرے دل میں نہاں پھول کھلنے لگے
صبح بھی آپؐ سے شام بھی آپؐ سے