اردوئے معلیٰ

Search

بجھتے بجھتے بھی اندھیروں میں کرن چھوڑ گیا

وہ مرا شوخ ستارہ جو گگن چھوڑ گیا

 

خواب تو خواب مجھے نیند سے ڈر لگتا ہے

جانے والا مری پلکوں پہ شکن چھوڑ گیا

 

اُس نے بھی چھوڑ دیا مجھ کو زمانے کے لئے

جس کی خاطر میں زمانے کے جتن چھوڑ گیا

 

کسی زیور کی طرح اُس نے نکھارا مجھ کو

پھر کسی اور کی جھولی میں یہ دھَن چھوڑ گیا

 

دے رہا ہے مجھے پسپائی کے طعنے وہ بھی

میری رفتار میں جو اپنی تھکن چھوڑ گیا

 

بھول جانے کی قسم لے گیا وہ رشکِ گلاب

یاد رکھنے کو مہک، رنگ، چبھن چھوڑ گیا

 

دستکِ دستِ طلب بس میں نہیں تھی اس کے

سو میں دہلیز پہ خود اپنا بدن چھوڑ گیا

 

نہ کوئی آگ لگائی، نہ ڈھلا پانی میں

کیسا آنسو تھا کہ آنکھوں میں جلن چھوڑ گیا

 

تھک کے بیٹھا تھا برابر میں کوئی پاس مرے

اور مرے کاندھے پہ برسوں کی تھکن چھوڑ گیا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ