اردوئے معلیٰ

بختِ خفتہ کے سبھی جڑ سے ہی کٹ جائیں درخت

یا خدا سر سے گناہوں کے یہ ہٹ جائیں درخت

 

سر پٹک کر ہی ہاں رہ جائیں یہ طوفاں سارے

نامِ سرکار کہیں لے کے جو ڈٹ جائیں درخت

 

عشق و الفت کے سدا جھوکے لگیں گے ہر جا

ان کی تعلیم کے گر چار سو بٹ جائیں درخت

 

میں مسافر ہوں مدینہ کا دعا ہے میری

راہ طیبہ میں گرے سارے ہی ہٹ جائیں درخت

 

یاخدا وصل میسر ہو کبھی مجھ کو اور

فرقتِ صاحبِ لولاک کے کٹ جائیں درخت

 

جب محافظ ہے خدا اس کا اے دنیا والو

کیسے پھر دھر سے یہ نعت کے گھٹ جائیں درخت

 

بارشیں ہو نہ اگر ان کے کرم کی خاکی

بخدا سوکھ کے اک پل میں ہی پھٹ جائیں درخت

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات