اردوئے معلیٰ

Search

بساؤں آنکھ میں بس اپنے یار کی صورت

فقط یہی ہے مِرے اِفتخار کی صورت

 

مِرے حسینؓ کی کیا بات ہے کہ حق کے لیئے

کھڑے ہیں ڈٹ کے کسی کوہسار کی صورت

 

جگی ہے جب سے مدینے کی حاضری کی اُمنگ

نہ پوچھ مجھ سے مرے انتظار کی صورت

 

حضور خواب میں آئیں تو بات بن جائے

لٹاؤں اُن پہ یہ بانہیں میں یار کی صورت

 

مروں تو نعت محمد کی پڑھتے پڑھتے مروں

اُٹھوں تو ان کے عقیدت گزار کی صورت

 

چمن وہ کیا کہ جہاں پھول ہی نہ ہوں موجود

حیات عشق بنا ریگزار کی صورت

 

رشیدؔ واقعۂِ کربلا کے یاد آتے

چُبھے ہے سانس میں کچھ تیز دھار کی صورت۔

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ