اردوئے معلیٰ

بصد تضرع ، قدم قدم پر ادب کے سجدے لٹا رہے ہیں

نبی کے شہر کرم کی جانب نبی کے دیوانے جا رہے ہیں

 

نبی کے روضے کے سامنے ہیں نبی کے لطف و کرم کے صدقے

لگے ہیں دل پر جو داغ عصیاں ہم آنسوؤں سے مٹا رہے ہیں

 

جو دل بچھائیں در نبی پر جو خاک طیبہ سجائیں سر پر

دعا و تبریک کے تحائف ملایکہ سے وہ پا رہے ہیں

 

جہانِ ظلمت کا خوف کیسا؟ سیاہئ شب کی فکر کیسی؟

نجوم ذکر شہ امم سے ہمارے دل جگمگا رہے ہیں

 

جنہیں ابھی تک نہ دید طیبہ کا جام شیریں ہوا میسر

وہ تشنہ لب عالم تصورمیں پیاس اپنی بجھا رہے ہیں

 

جو ہجر طیبہ کی گرمیوں سے سلگ رہے تھے تڑپ رہے تھے

وہ بارش رحمت و کرم میں نہال ہوکر نہا رہے ہیں

 

درود کا ورد کرتے رہیے نبی کو ہر وقت یاد رکھیے

صبا سنائے گی پھر یہ مژدہ کہ چلیے آقا بلا رہے ہیں

 

ہے مصطفےٰ پر جنہیں بھروسہ، غلام جتنے ہیں مصطفےٰ کے

کسی بھی سیلاب رنج و غم کو کہاں وہ خاطر میں لا رہے ہیں

 

مرے یقیں کے چمکتے کاغذپہ کوئی تحریر کر گیا ہے

بلائیں گے نور ؔتم کو آقا قریب وہ دن بھی آ رہے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات