اردوئے معلیٰ

Search

بنے ہیں دونوں جہاں شاہِ دوسرا کے لیے

سجی ہے محفل کونین مصطفیٰ کے لیے

 

زباں کو اس لیے شیرینئی بیان ملی

زباں ہے مدتِ محبوب کبریا کے لیے

 

گدائے کوئے مدینہ ہوں کس کا منہ دیکھوں؟

اُنہی کی بخششیں کافی ہیں مجھ گدا کے لیے

 

اُنہی کو لذت عشق نبی ملی، کہ جنہیں

ازل میں چُن لیا قدرت نے اسِ عطا کے لیے

 

مرے کریم! میرے چارہ ساز و بندہ نواز

تڑپ رہا ہوں ترے شہر کی ہوا کے لیے

 

فرازِ طور پہ وہ بے نقاب کیوں ہوتے؟

کہ آشنا کی تجلی تھی آشنا کے لیے

 

حضور نور ہیں محمود ہیں محمد ہیں

جگہ جگہ نئے عنوان ہیں ثنا کے لیے

 

اُنہی کا ذکر، اُنہی کا بیاں، اُنہی کا نام

ہر ابتدا کے لیے ہے ہر انتہا کے لیے

 

عجیب نشئہ بےنام سا ہوا محسوس

زبان جب بھی کھلی ہے تری ثنا کے لیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ