اردوئے معلیٰ

Search

بن جاؤں کبھی میں بھی مدینے کی مکیں کاش

قدموں میں بُلا لیں وہ مجھے عرش نشیں کاش

 

مِل جائیں مقدر سے کبھی وصل کی گھڑیاں

کِھل جائے مسرت سے مرا قلبِ حزیں کاش

 

پھر شام و سحر دیکھا کروں جلوے حرم کے

اور بیٹھی رہوں گنبدِ خضرا کے قریں کاش

 

روضے پہ سلامی کی جو مِل جائے سعادت

چوکھٹ پہ جھکاتی رہوں مَیں اپنی جبیں کاش

 

ہونٹوں پہ دُرودوں کے سلاموں کے ہوں نغمے

اور پیش کروں پھول عقیدت کے حسیں کاش

 

پھر عمر یہی گزرے ہے یہ ناز کی حسرت

مدفن کو بھی مل جائے جو یہ پاک زمیں کاش

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ