اردوئے معلیٰ

 

بچائیں گے تری ہم آن گنبدِ خضرا

نثار تجھ پہ دل و جان گنبدِ خضرا

 

محبتوں کی علامت ہے ایک عالم میں

عقیدتوں کی ہے پہچان گنبدِ خضرا

 

سکون پاتے ہیں تصویر ہی سے اہلِ دل

ہمارے درد کا درمان گنبدِ خضرا

 

جو چاہتے ہیں مٹانا زوال ہوگا انھیں

رہے گی تیری مگر شان گنبدِخضرا

 

رہیں ہمیشہ سلامت یہی دعا ہے مری

ہے جن کے دل میں ترا دھیان گنبدِ خضرا

 

ہوا ہے عالمِ اسلام آج بے چہرہ

مگر ہے دل نشیں پہچان گنبدِ خضرا

 

نہ بے قراری مُشاہدؔ کے دل میں آئے کبھی

سکونِ روح کا سامان گنبدِ خضرا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات