اردوئے معلیٰ

Search

بچھڑنے والے کی باتوں کا دہرانا نہیں بنتا

اگر خاموش رہتی ہوں تو افسانہ نہیں بنتا

 

کہانی کار تھوڑی دیر قصہ جاری رہنے دے

کہ بالکل درمیاں آکر تو مرجانا نہیں بنتا

 

انہیں آواز دے دے کر پرندے خود بلاتے ہیں

کوئی مرضی سے ان پیڑوں کا دیوانہ نہیں بنتا

 

تم ایسے نرم رو چہرے پرستانوں میں جچتے ہیں

ادھر اک دشت ہے اور دشت میں آنا نہیں بنتا

 

ہزاروں لوگ ہونگے دشمنی میں جی رہے ہونگے

کہ ہر اک شخص کا آپس میں یارانہ نہیں بنتا

 

تو پھر کیا ہے کوئی بچھڑا ؟ بچھڑ بھی جایا کرتے ہیں

مرے ماتم کناں اتنا بھی کرلانا نہیں بنتا

 

میں یوں بے کار ہوتی جارہی ہوں عشق میں کومل

کبھی برتن نہیں دھلتے کبھی کھانا نہیں بنتا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ