اردوئے معلیٰ

بہار خیز ہے ، خوشبو شغف ، بہ رنگِ فزوں

تری ثنا کی طراوت سے باغِ کُن فیکوں

 

بیانِ مدح میں عاجز رہے بہ عجزِ اَتم

ہزار ذوقِ تکلم ، ہزار جذبِ دروں

 

وفورِ شوقِ سفر میں ہے شوق خود حائل

سو عرض کرنا چاہُوں ، کروں تو کیسے کروں

 

ورائے حرف و بیاں بھی رہُوں ثنا گستر

مرے نصیب میں لکھ دے شرَف یہ میرے جنوں

 

اُجال دیں گے شبِ تارِ خانۂ ظلمت

مدینے لے کے چلا ہُوں دلِ ملول و زبوں

 

کچھ اس طرح سے ہو اب کے برس نویدِ سفر

حیات دائمی پاؤں جو طیبہ جا کے مروں

 

خیال رکھتے ہیں مرا بہ مقتضائے طلب

وہ تھام لیتے ہیں مجھ کو مَیں جب بھی گرنے لگوں

 

فصیلِ چشم پہ روشن رہے درود کا نجم

درونِ قلب عقیدت سے تیری نعت سنوں

 

رہے گی رفعتِ ذکرِ نبی فزوں مقصودؔ

بکھر ہی جائیں گے اندیشہ ہائے گونا گوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات