اردوئے معلیٰ

Search

بیاں ہے لبوں پر شہِ انس و جاں کا

مرے گرد حلقہ ہے کرّ و بیاں کا

 

وہ محبوب و ممدوح ربِ جہاں کا

یہ رتبہ خوشا قبلۂ مقبلاں کا

 

شرف آسماں سے بڑھا خاکداں کا

کہ مسکن ہے یہ عرش کے میہماں کا

 

ہے پہرہ بہاروں کا در شہرِ خوباں

گزر کیسے ممکن وہاں ہو خزاں کا

 

سوادِ مدینہ قریب آ گیا ہے

بڑھا شوق دل کا بڑھا کیف جاں کا

 

سخن کیوں نہ ہر اک ہو پیوستۂ دل

کہ فرمودہ ہے اس لبِ گل فشاں کا

 

درود اس پہ بھیجیں بہ حکمِ الٰہی

وظیفہ ہے دن رات کرّ و بیاں کا

 

وہ محشر جہاں نفسی نفسی کا عالم

وہی ایک ماویٰ ہے بے چارگاں کا

 

اُسی سے پلا مجھ کو ساغر پہ ساغر

جو خم ہے مرے ساقیِ مہرباں کا

 

بن آئے نظرؔ اپنی جا کر مدینہ

وہیں رشتہ ٹوٹے جو عمرِ رواں کا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ